مزاحمتی جنگجوؤں اور قابض فوج کے درمیان مسلح جھڑپیں جنین کے جنوب میں واقع قصبے قباطیہ پر مؤخر الذکر کے طوفان کے دوران

صہیونی فوجیوں کی جانب سے شہر کے جنوب میں واقع قبطیہ پناہ گزین کیمپ پر دھاوا بولنے کے دوران پیر کی صبح سویرے اسرائیلی قابض افواج اور جنین بریگیڈ کے فلسطینی مزاحمت کاروں کے درمیان مسلح تصادم شروع ہوگیا۔ قابض فورسز کی دراندازی کا جواب دینے والے قابض فورسز اور متعدد نوجوانوں کے درمیان پرتشدد تصادم شروع ہوا جس نے رہائی پانے والے قیدی امجد دمونی کو قباطیہ قصبے میں واقع اس کے گھر سے گرفتار کر لیا۔ نوجوانوں کی گرفتاریوں کی مہم کو کئی گھنٹوں تک جاری رکھنے کے بعد فلسطینی نوجوانوں نے قابطیہ قصبے سے پیچھے ہٹتے ہی قابض فوج پر پتھراؤ کیا اور مزاحمتی جنگجو قابض گاڑیوں کی طرف گولی چلانے میں کامیاب ہو گئے جنہوں نے قصبے پر حملہ کیا، خاص طور پر مشرقی علاقے میں۔ عینی شاہدین نے بتایا کہ قابض فوج نے قصبہ قبطیہ اور جبل دمونی میں مکانات کی چھتوں پر سنائپرز نصب کئے۔ انہوں نے مزید کہا کہ خصوصی دستوں نے قصبے میں کئی گھروں پر چھاپے مارے اور تلاشی لی اور شہریوں کی املاک کو توڑ پھوڑ کی۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles