انتخابی نتائج ، بصرہ میں احتجاج جاری

عراقی شہر بصرہ میں الیکشن کمیشن کے دفتر کے سامنے ایک دھرنا جاری ہے ۔ دھرنا مظاہرین کا کہنا ہے کہ 10 اکتوبر کو ہونے والے انتخابات کے نتائج میں دھوکہ دہی کی گئی ہے ۔

اس دھرنے میں شرکت کرنے والے سیاسی بلاک اور جماعتیں شیعہ اتحاد کی چھتری تلے ہیں جن میں سب سے اہم فتح بلاک ہے جس کی قیادت ہادی العامری ، عصائب اہل الحق اور حزب اللہ بریگیڈ کے علاوہ صوبے کے قبیلے اور انسانی حقوق کی انجمنیں شامل ہیں ۔

عراق کی گورنریٹس نے حالیہ انتخابات کے نتائج کے خلاف بڑے پیمانے پر احتجاج کی لہر دیکھی ہے ، غیر ملکی مداخلت کی وجہ سے جو اس کے فراڈ اور اس کے نتائج میں ہیرا پھیری کا باعث بنی ۔

آزاد ہائی الیکٹورل کمیشن نے کمیشن کو موصول ہونے والی 181 میں سے 174 اپیلوں کے جواب کا اعلان کیا جس کا مطلب ہے کہ صرف 7 اپیلوں کا جائزہ لیا جائے گا ۔

ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ضروری تفتیشی طریقہ کار کو مکمل کرنے کے بعد 181 میں سے 7 اپیلیں قبول کی گئیں جنہیں شواہد کے ذریعے سپورٹ کیا گیا ۔ دوبارہ کھولے جانے والے حلقوں میں بغداد کے دو ، بصرہ کا ایک ، اربیل کا ایک اور نینوا کے تین حلقے شامل ہیں ۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ مسابقتی امیدواروں کی موجودگی میں ووٹوں کی دوبارہ گنتی ہو گی ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles