ایرانی وزیر خارجہ کل نیویارک جائیں گے ، خطیب زادہ

ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان سعید خطیب زادہ نے اعلان کیا کہ وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان کل پیر کو نیویارک کا دورہ کریں گے ۔ وزیر خارجہ ، اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کریں گے ۔ وزیر خارجہ اس دورے کے دوران 4 + 1 گروپ کے وزرائے خارجہ کے علاوہ مختلف ممالک کے وزرائے خارجہ سے بھی ملاقات کریں گے ۔

انہوں نے مزید کہا کہ "4 + 1” گروپ کے ساتھ ملاقات کے حوالے سے ہم نے ابھی تک اس حوالے سے کوئی فیصلہ نہیں کیا ہے لیکن اگر ہم دیکھیں گے کہ یہ ملاقات مذاکرات کے دوران مفید ثابت ہوگی تو ہم ایسا فیصلہ کریں گے ۔ اہم بات یہ ہے کہ وزیر خارجہ "4 + 1” گروپ کے ممالک کے وزرائے خارجہ سے دوطرفہ ملاقاتوں کی صورت میں ملاقات کریں گے اور اگر اس حوالے سے کوئی خاص ایجنڈا ہو تو اسے اجتماعی طور پر منعقد کیا جا سکتا ہے ۔

دوسری جانب ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے شنگھائی تعاون تنظیم میں اسلامی جمہوریہ ایران کی مستقل رکنیت کو تہران پر تنہائی مسلط کرنے کے منصوبے کا خاتمہ قرار دیا ۔ انہوں نے کہا کہ آنے والے دنوں میں صدور کی سطح پر اور شنگھائی تعاون تنظیم کے رکن ممالک کے سربراہی اجلاس میں شریک وفود کے درمیان ہونے والے مذاکرات کے نتائج زیادہ سے زیادہ واضح ہو جائیں گے ۔

انہوں نے مزید کہا کہ شنگھائی تنظیم بہت سی توانائیوں کا مالک ہے جس سے تنظیم اور ایران باہمی توانائیوں سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں تاکہ تعلقات کی سطح اور تنظیم کی حیثیت کو بلند کیا جا سکے ۔ شنگھائی تنظیم میں ایران کی موجودگی ، تنظیم کی صلاحیت کو بڑھا دے گی اور اس تنظیم کے اندرونی میکانزم ہمارے لیے اہم ہیں اور ہم ان میکانزم کو ممبران کے تعاون سے اپ گریڈ کرنے کے لیے پرعزم ہیں ۔

خطیب زادہ نے کہا کہ شنگھائی تنظیم میں ایران کی مستقل رکنیت امریکہ سمیت بعض کی جانب سے ایران پر تنہائی مسلط کرنے کے منصوبے کی ناکامی کا عملی خاتمہ ہے ۔

مزید برآں ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے اس بات کی تصدیق کی کہ لبنان میں ایرانی ایندھن بھیجنا لبنانی تاجروں کی جانب سے مکمل اور معمول کی خریداری کے عمل کے مطابق آیا ہے ۔ اگر لبنانی حکومت بھی ایران سے ایندھن خریدنا چاہتی ہے تو لبنان کا امن اور استحکام ہمارے لیے ہر چیز سے زیادہ اہم ہے اور ہم لبنانی حکومت کی کامیابی کے لیے مدد کریں گے ۔

لبنانی وزیر اعظم نجیب میقاتی کا ایرانی ایندھن کو لبنان کی خود مختاری کی خلاف ورزی قرار دینے کے بیان کے جواب میں وضاحت کی اور کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ہمیشہ اپنے دوستوں اور دوست حکومتوں کی حمایت کے لیے پرعزم ہے ۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ تجارتی عمل لبنانی تاجروں کی درخواست پر ہوا اور یہ ایک مکمل اور عام خریداری ہے جس کے مطابق ایندھن کی کھیپ بھیجی گئی تھی ۔ انہوں نے کہا ہے کہ میں لبنان کے اندرونی مسائل پر رائے کا اظہار نہیں کرتا لیکن میں آپ کو یقین دلاتا ہوں کہ اگر لبنان کی حکومت چاہتی ہے کہ کل ہم سے ایندھن خریدے تاکہ اپنے لوگوں کے مسائل کو حل کیا جا سکے تو ہم اسے اس کے اختیار میں رکھیں گے ۔

خطیب زادہ نے اس بات پر زور دیا کہ لبنان میں امن ، سلامتی اور استحکام ہمارے لیے کسی بھی چیز سے زیادہ اہم ہے اور ہم لبنانی حکومت کی اس راہ میں کامیابی حاصل کرنے میں بھی مدد کر رہے ہیں ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles