بغداد اور واشنگٹن کا عراق میں امریکی جنگی یونٹوں کو کم کرنے پر اتفاق

عراقی جوائنٹ آپریشن کمانڈ نے اعلان کیا ہے کہ عراقی ملٹری ٹیکنیکل کمیٹی نے اپنے امریکی ہم منصب کے ساتھ عراقی دارالحکومت بغداد میں ایک میٹنگ کی جس کے نتیجے میں امریکی جنگی افواج کے ساتھ انبار میں "عین الاسد” اور کردستان ریجن کے دارالحکومت اربیل میں فوجی اڈوں میں کمی کرنے کا معاہدہ ہوا ہے ۔

اس کے بعد جوائنٹ آپریشنز نے ایک بیان جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ عراقی ملٹری ٹیکنیکل کمیٹی کے درمیان ایک میٹنگ جو جوائنٹ آپریشنز کے ڈپٹی کمانڈر عبد الامیر الشمری اور اس کے امریکی ہم منصب کی سربراہی میں ہوئی ۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ دونوں فریقوں نے عین الاسد اور اربیل میں فوجی اڈوں سے جنگی یونٹس اور امریکی صلاحیتوں کو کم کرنے پر اتفاق کیا جو کہ اس ستمبر کے آخر تک مکمل کیا جائے گا ۔ بین الاقوامی اتحاد کی قیادت کی سطح ایک ٹیم آفیسر کی زیر قیادت ہیڈ کوارٹر سے کم ہو کر ایک آفیسر کی زیر قیادت چھوٹا ہیڈ کوارٹر میں کم ہو جائے گی ۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ دونوں فریقوں نے تصدیق کی ہے کہ امریکی اور بین الاقوامی اتحادی افواج کی موجودگی عراق کی دعوت پر ہے اور اس کا انحصار عراقی حکومت سے تحفظ کی فراہمی پر ، بین الاقوامی قوانین اور اصولوں کے مطابق اور عراقی خودمختاری کے مطابق ہے ۔

دونوں فریقوں نے اس بات پر بھی اتفاق کیا کہ بقیہ مراحل کی بحث کو مکمل کرنے کے لیے باقاعدہ سیشن منعقد کیے جائیں تاکہ بین الاقوامی اتحادی افواج کے لیے غیر جنگی کردار کی اس سال کے آخر میں طے شدہ مخصوص وقت تک منتقلی کو محفوظ کیا جا سکے ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles