ماسکو نے امریکی بحری جہاز کو بحیرہ جاپان سے بھگا دیا ، واشنگٹن کی تردید

واشنگٹن نے ماسکو کے اس اعلان کی تردید کی ہے کہ امریکی جنگی جہاز روسی علاقائی پانیوں کے بہت قریب آگئے تھے جبکہ ماسکو کے اعلان کے مطابق دو روسی اور امریکی جنگی جہاز بحیرہ جاپان میں خطرناک طور پر ایک دوسرے کے قریب پہنچ چکے تھے ۔

روسی وزارت دفاع نے ایک بیان میں کہا کہ امریکی تباہ کن "چافی” جو کئی دنوں سے جاپان کے سمندر میں کام کر رہا ہے ، تقریبا 17:00 (08:00 GMT) پر روس کے علاقائی پانیوں کے قریب پہنچ گیا اور بلااجازت سرحد پار کرنے کی کوشش کی ۔

ماسکو کے بیان میں مزید کہا گیا کہ اینٹی سب میرین جہاز ‘ایڈمرل ٹریبیوٹس’ اس علاقے میں موجود تھا اور اس نے غیر ملکی جہاز کو ان ناقابل قبول کاروائیوں کے حوالے سے وارننگ جاری کی ۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکی تباہ کن جہاز ، روسی عملے کے قومی سرحدوں کی خلاف ورزی کو روکنے کے عزم سے قائل تھا اور 17:50 کے قریب واپس چلا گیا جب یہ” ایڈمرل ٹریبیوٹس”جہاز سے ساٹھ میٹر سے بھی کم فاصلے پر تھا ۔

انہوں نے مزید کہا کہ روسی بحریہ نے امریکی بحری جہاز کو مطلع کیا تھا کہ وہ ایک علاقے میں جہاز رانی کر رہا ہے جو کہ مشترکہ روسی چین مشترکہ مشقوں C 2021 کے ایک حصے کے طور پر توپ خانے کی فائرنگ کے باعث جہاز رانی کے لیے بند ہے ۔

اس بیان کے جواب میں امریکی بحریہ نے کہا کہ جو کہا گیا وہ "غلط” ہے ۔ ایک بیان میں اس نے کہا کہ یو ایس ایس چافی "بحیرہ جاپان کے بین الاقوامی پانیوں میں معمول کی کاروائیاں کر رہا ہے ۔ اس نے دونوں جہازوں کے درمیان تعامل کو "محفوظ اور پیشہ ورانہ” قرار دیا ۔

واشنگٹن نے تسلیم کیا کہ روس نے امریکی ملاحوں کو خطے میں مشقوں سے آگاہ کیا تھا لیکن اس بات کی تصدیق کی کہ وہ "دن کے بعد” شیڈول تھے ۔

امریکی بحریہ نے مزید کہا کہ اس کا تباہ کن جہاز چافی بین الاقوامی قوانین اور اصولوں کا احترام کرتا ہے ۔ امریکہ جہاں بھی بین الاقوامی قانون اجازت دیتا ہے وہاں پرواز ، جہاز رانی اور کام جاری رکھے گا ۔ روسی بحریہ کے ساتھ واقعات بحرالکاہل میں شاذونادر ہی ہوتے ہیں ۔

یہ خطہ چین کے زیر کنٹرول ہے جو امریکہ اور اس کے اتحادیوں کی جانب سے خطے کے بین الاقوامی پانیوں میں کیے جانے والے باقاعدہ گشت کو اطمینان سے نہیں دیکھتا ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles