شفاف انتخابات ہوئے ہیں جس میں عراق جیت چکا ہے ، مصطفیٰ الکاظمی

الکاظمی نے کہا کہ انتخابات انتہائی شفافیت کے ساتھ منعقد کیے گئے جبکہ اس بات کی نشاندہی کرتے ہیں کہ ان میں کوئی ہارنے والا نہیں ہے ۔

کاظمی نے مزید کہا ہے کہ ہم نے بغیر کسی سیکورٹی اور قانونی خلاف ورزیوں کو ریکارڈ کیے انتخابات کو وقت پر منعقد کرنے کا اپنا وعدہ پورا کیا ہے ۔ بغیر کرفیو اور وزیر اعظم کا بطور امیدوار انتخابات میں حصہ لیے بغیر یہ پہلے عراقی انتخابات ہیں ۔ انہوں نے مزید کہاکہ میں نے انتخابات میں حصہ نہیں لیا اور انہیں سالمیت ، ساکھ اور اعتماد دیا اور انہیں کسی بھی ممکنہ سیاسی دباؤ سے دور کیا ۔ انتخابات جمہوری عمل کی بنیاد اور روح ہیں ۔ عراقیوں نے انتخابات میں اپنی شرکت سے ثابت کیا ہے کہ وہ اپنے بہتر مستقبل کا خواہاں ہیں اور ماضی میں جانے سے انکار کرتے ہیں ۔

ہمیں بطور عوام ، سیاسی قوتوں اور حکومت کو متحد اور تعاون کرنا چاہیے ۔ انتخابات اور ان کے نتائج کو عملی طریقے سے ترجمہ کرناا چاہیے ، وعدوں اور نعروں سے دور رہنا چاہیے ، بلکہ غلطیوں کو درست کرنے کے لیے سخت محنت کرنی چاہیے ۔ ایسے لوگوں کے لائق مستقبل کے لیے تجربات اور منصوبہ بندی جن کی تاریخ انسانیت میں ہے ۔ ہمیں اپنی اقدار پر قائم رہنا چاہیے اور ہمارے اخلاق اور ہمیں ریاست کی منطق اور اس کی خودمختاری ، اور اس کی موجودگی کو مضبوط بنانے میں تعاون کریں ۔ ایک خودمختار ریاست کا کوئی متبادل نہیں ہے جو اپنے لوگوں کے مفادات کو محفوظ بنائے ۔

انہوں نے کہا کہ بین الاقوامی برادری اور عراق میں مختلف ممالک کے اعتماد کو ان انتخابات سے تقویت ملی جو کسی بھی حکومتی مداخلت یا دباؤ سے دور ، سالمیت اور شفافیت کی اعلیٰ ترین سطح کے ساتھ منعقد ہوئے ۔ جیتنے والوں کو لے جانے کے لیے تیار رہنے کا مطالبہ کیا ۔ ان کے کاموں کو ان کی پوری صلاحیت کے ساتھ اور یہ کہ ان کے کام کو سنجیدگی اور نیک نیتی سے نمایاں کیا جائے ۔ الکاظمی نے "جیتنے والوں اور انتخابی عمل کے تمام شرکاء” کو اپنی مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ ان انتخابات میں کوئی ہارنے والا نہیں ہے اور ہر کوئی فاتح ہے کیونکہ اس میں عراق کی جیت ہے ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles