پرتشدد جھڑپوں کے درمیان.. مزاحمت کاروں نے جنین پناہ گزین کیمپ میں قابض فوج نے دھاوا بول دیا، اور ایک نوجوان کو زخمی کر دیا

رہائی پانے والا قیدی، داؤد الزبیدی، قیدی زکریا الزبیدی کا بھائی، الظہر کے علاقے میں قابض اسنائپرز کی گولیوں سے زخمی ہو گیا تھا اور اسے ابن سینا اسپتال منتقل کیا گیا تھا، جب کہ جنین میں مزاحمتی جنگجوؤں اور جنگجوؤں کے درمیان پرتشدد جھڑپیں ہوئیں۔ قابض فوج شہر کے کیمپ پر حملہ کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔
اور مقامی ذرائع نے بتایا کہ "قابض فوج کی ایک بڑی فورس نے جنین پناہ گزین کیمپ کے قریب ایک علاقے پر دھاوا بول دیا، جب کہ مزاحمتی جنگجوؤں نے قبضے کی طرف فائرنگ کرکے جواب دیا۔”
انہوں نے وضاحت کی کہ قابض فوج اور مزاحمتی جنگجوؤں کے درمیان جنین پناہ گزین کیمپ کے اطراف میں پرتشدد اور مسلسل جھڑپیں جاری ہیں جہاں صہیونی فوجی کیمپ میں داخل ہونے کی کوشش کر رہے ہیں۔
اس کی طرف سے، القدس بریگیڈز – جنین بریگیڈ نے کہا کہ "خدا کی مدد اور طاقت سے، ہمارے مجاہدین کیمپ پر حملہ کرنے والی قابض افواج کا مقابلہ کر رہے ہیں اور اس پر گولیوں کی بوچھاڑ کر رہے ہیں۔”
جینین بریگیڈ نے مزید کہا: "ہمارے مجاہدین ثابت قدم کیمپ کی گلیوں میں قابض افواج کا مقابلہ کرتے رہتے ہیں۔”
ایک صحافی نے رپورٹ کیا کہ قابض فوج نے جنین کیمپ پر دھاوا بول کر محمود الدبی کے گھر کو نشانہ بنایا۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles