افغانستان کے بحران کی وجہ واشنگٹن کا غیر ذمہ دارانہ رویہ ہے ، پوٹن

برکس سمٹ میں روسی صدر ولادی میر پیوٹن نے کہا ہے کہ افغانستان میں عدم استحکام کی نئی لہر امریکہ کی جانب سے اپنی اقدار مسلط کرنے کی غیر ذمہ دارانہ کوششوں سے منسلک ہے ۔

گروپ کی ویڈیو کانفرنس میں روسی صدر نے مزید کہا ہے کہ امریکہ اور اس کے اتحادیوں کے انخلاء نے ایک نئے بحران کو جنم دیا اور یہ ابھی تک واضح نہیں ہے کہ یہ سب علاقائی اور عالمی سلامتی کو کس طرح متاثر کرے گا ۔

پوٹن نے کہا ہے کہ برکس ممالک مسلسل افغانستان میں امن کا مطالبہ کر رہے ہیں ۔ روس اپنے برکس شراکت داروں کی طرح مسلسل افغان سرزمین پر طویل انتظار کے لیے امن اور استحکام کا مطالبہ کرتا رہا ہے ۔ اس ملک کے لوگ کئی دہائیوں سے جدوجہد کر رہے ہیں اور اب انہیں آزادانہ طور پر اپنی ریاست کی شکل کا تعین کرنے کا حق حاصل ہے ۔

انہوں نے کہا کہ ابھرتے ہوئے کثیر قطبی نظام کو مضبوط کرنا ضروری ہے جو معاشی ترقی اور سیاسی اثر و رسوخ کے آزاد مراکز پر مشتمل ہے اور اس میں یقینی طور پر برکس ممالک بھی شامل ہیں ۔

پوٹن نے مزید کہا ہے کہ افغانستان میں تجربہ رکھنے والے لوگ پیچھے ہٹ چکے ہیں اور اب پوری عالمی برادری کو اس کے نتائج کو مکمل طور پر نگلنا ہوگا ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles