ہم اپنی سرحدوں کے قریب اسرائیلی موجودگی کو برداشت نہیں کر سکتے ، ایرانی وزیرخارجہ

ایرانی وزیر خارجہ حسین امیر عبداللہیان نے کہا ہے کہ ہم اپنی سرحدوں کے قریب صہیونی وجود کی موجودگی کو کبھی برداشت نہیں کریں گے ۔

امیر عبداللہیان نے ایرانی میڈیا کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران کہا کہ ان کے ملک نے آرمینیا کے قبضے سے کراباخ کی آزادی کی حمایت کی ۔ کراباخ کی آزادی کے دوران کچھ دہشت گرد عناصر کو لایا گیا اور اس وقت صیہونی وجود نے اس کشیدگی سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کی ۔ ایران نے اُسی وقت سیاسی فوجی اور سکیورٹی سطح پر مختلف سفارتی ذرائع کے ذریعے انتباہ دیا تھا اور تمام تر سنجیدگی کے ساتھ آذربائیجان کے اعلیٰ حکام تک یہ پیغام پہنچایا تھا کہ تہران دونوں ممالک کے روز افزوں تعلقات کو اہمیت دیتا ہے مگر ساتھ ہی وہ کسی قیمت پر اپنی سرحدوں کے قریب خود ساختہ صیہونی حکومت کی موجودگی اور علاقے کے جیوپولیٹیکل چینج کو برداشت نہیں کرے گا ۔

ایرانی وزیر خارجہ نے تصدیق کی کہ امریکیوں نے نیویارک میں مختلف چینلز کے ذریعے ہم سے رابطہ کرنے کی کوشش کی اور ہم نے ثالثوں سے کہا کہ اگر ان کے ارادے سنجیدہ ہیں تو انہیں سنجیدہ اشارہ جاری کرنے چاہیے ۔ ہم نے ثالثوں سے کہا کہ امریکیوں کا سنجیدہ اشارہ ، کم از کم 10 بلین ڈالر منجمد ایرانی فنڈز جاری کرنے کا ہونا چاہیے ۔ انہوں نے اشارہ کیا کہ کافی کے ساتھ ختم ہونے والے مذاکرات بیکار ہیں ۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ امریکہ کو معلوم ہونا چاہیے کہ علاقے کے بارے میں اس بار ہر چیز تحریری طور پر نہیں بلکہ یہ عملی طور پر ہوگی۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles