ہم طالبان کی متوقع حکومت کو تسلیم کرنے پر غور کر رہے ہیں ، روس

روس نے حالیہ امریکی حملے کی مذمت کی جس کے نتیجے میں افغان دارالحکومت کابل میں شہری ہلاکتیں ہوئیں اور اس بات پر زور دیا کہ وہ اس ملک کو انسانی بنیادوں پر امداد فراہم کرنے کے امکانات پر تبادلہ خیال کر رہا ہے اور وہ طالبان کی حکومت کو تسلیم کرنے کی امید کا مطالعہ کر رہا ہے ۔

روسی وزارت خارجہ کی ترجمان ماریہ زاخارووا نے اشارہ کیا کہ 29 اگست کو ایک ڈرون کے ذریعے کیا گیا حملہ افغانستان میں نیٹو افواج کی موجودگی کے لیے آخری قدم بن گیا جس نے نو افراد کی جان لے لی جن میں چھ بچے بھی شامل ہیں ۔

زاخارووا نے پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ ہم طاقت کے صوابدیدی استعمال کے اس کیس کی شدید مذمت کرتے ہیں ۔

ترجمان نے افغانستان میں نیٹو کی فوجی مہم کے نتائج کو ناکامی نہیں بلکہ تباہی قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس ملک میں پرانے مسائل جیسے کہ دہشت گردی ، منشیات کی سمگلنگ اور معیار زندگی کا بگاڑ ، حل نہیں ہوئے ہیں پچھلے 20 سالوں کے دوران اور یہاں تک کہ بہت سے معاملات میں اس میں اضافہ ہوا ہے ۔

زاخارووا نے اس بات پر غور کیا کہ نیٹو افواج افغانستان میں ایک قابل عمل سیاسی نظام قائم کرنے میں ناکام رہی ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان برسوں کے دوران حالات بہتر یا زیادہ مستحکم نہیں ہوئے ۔

روسی سفارت کار نے مغربی ممالک کی جانب سے اس ملک کی امداد کی معطلی کے نتیجے میں افغانستان میں سیاسی اور معاشی کشیدگی میں اضافے کے بارے میں ماسکو کی تشویش کا اظہار کیا ۔ اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ اب بھی کام شروع کرنے کے معاملے پر ابہام کی کیفیت برقرار ہے ۔ سرکاری اداروں اور بینکوں کے علاوہ کابل میں طالبان کی پالیسیوں کی بڑھتی ہوئی مخالفت اور دیگر بڑے شہروں میں اشیاء کی قیمتوں میں اضافہ ہو رہا ہے ۔

روسی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ عالمی برادری افغانستان میں انسانی بحران کو پھیلنے سے روکنے کے لیے موثر اقدامات کرے ۔ زاخارووا نے روس کی حمایت کا اظہار کیا کہ ایک جامع اتحادی حکومت تشکیل دی جائے جس میں جلد از جلد افغانستان میں تمام سیاسی اور نسلی قوتیں شامل ہوں ۔

انہوں نے زور دیا کہ ماسکو افغانستان میں "طالبان” تحریک کی اتھارٹی کو تسلیم کرنے کے امکان کا مطالعہ کرے گا جس میں حکومت کی تشکیل کے بعد ملک کی تمام جماعتیں شامل ہوں گی ۔

ایک اور تناظر میں زاخارووا نے اعلان کیا کہ اس نے خلیجی خطے میں اپنے اجتماعی تحفظ کے تصور کو اپ ڈیٹ کیا ہے اور اس دستاویز کے تازہ ترین ورژن کے بنیادی اصولوں کو ظاہر کیا ہے ۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ خلیج کی صورت حال کو فی الحال کوئی گرم مسئلہ نہیں سمجھا جاتا لیکن گزشتہ دہائیوں کے دوران اس کی اہمیت کم نہیں ہوئی ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles