جلد بین الاقوامی سرحدیں کھول دیں گے ، آسٹریلوی وزیراعظم

آسٹریلیا کے وزیر اعظم سکاٹ موریسن نے اعلان کیا ہے کہ بین الاقوامی سفر پر عائد پابندی جلد ختم کر دی جائے گی ۔ موریسن نے کینبرا میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ بہت جلد ہم ان بین الاقوامی سرحدوں کو دوبارہ کھول سکیں گے ۔

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ آسٹریلیا کے شہری اور رہائشی کی مکمل طور پر ویکسینیشن کی شرح 80 فیصد تک پہنچ جائے گی گے تو وہ ریاستوں سے دوبارہ سفر کر سکیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ اگلے ماہ سے شروع ہوگا ۔

انہوں نے اعلان کیا کہ آسٹریلوی شہریوں اور رہائشیوں کو جو دوہری خوراک کے ساتھ مکمل طور پر ویکسین کے ساتھ ملک کے ڈرگ ریگولیٹر ، تھراپیٹک گڈز ایڈمنسٹریشن کی طرف سے تسلیم شدہ ہیں ، سات دن کے ہوم قرنطین سے گزر سکیں گے ۔ جن لوگوں کو ویکسین نہیں دی گئی ہے یا جنہیں TGA سے تسلیم شدہ ویکسین نہیں ملی ہے انہیں 14 دن کے لیے ہوٹل میں قرنطینہ کرنے کی ضرورت ہوگی ۔ نومبر میں کوویڈ 19 سے متعلقہ بین الاقوامی سفری پابندیاں ختم کر دی جائیں گی اور آسٹریلین سفر کر سکیں گے ۔

کینبرا حکومت کچھ ممالک مثلا نیوزی لینڈ کے لیے غیر قرنطینہ سفر کو باقاعدہ بنانے کے لیے بھی کام کر رہی ہے ۔ آسٹریلیا کی بین الاقوامی سرحدیں مارچ 2020 سے چند استثناء کے ساتھ رہائشیوں اور شہریوں کے لیے سب کے لیے بند کر دی گئی ہیں ۔

ابھی تک 16 سال سے زائد عمر کے 54 فیصد سے زائد آسٹریلوی باشندوں کو مکمل طور پر ویکسین دی گئی ہے اور 16 سال سے زیادہ عمر کے 78 فیصد کو ایک خوراک ملی ہے ۔

ایک اور سیاق و سباق میں ، آسٹریلوی وزیر اعظم نے انکشاف کیا کہ وہ کورونا وائرس کی وجہ سے وہ گلاسگو میں اقوام متحدہ کے موسمیاتی مذاکرات میں شرکت نہیں کریں گے ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles