سب سے خطرناک چیز جو فلسطینی قیدیوں کے سامنے آتی ہے وہ قید تنہائی ہے ، خالدہ جرار

پاپولر فرنٹ کی رہنما خالدہ جرار نے اسرائیلی جیلوں اور جیلوں میں قیدیوں کے رویے کے بارے میں بات کی ۔

اپنی آزادی حاصل کرنے کے تین دن بعد المنار ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے جرار نے تصدیق کی کہ قیدیوں کے سامنے سب سے خطرناک چیز قید تنہائی ہے ۔

اتوار ، 26 ستمبر ، قبضے نے ممبر فلسطینی پارلمنٹ ، پاپولر فرنٹ کے پولیٹیکل بیورو کے رکن خالدہ جرار کو ڈیمون ملٹری جیل سے دو سال کی حراست کے بعد رہا کیا ۔

58 سالہ جرار نے اپنی آخری گرفتاری کے بعد دو سال قید کی سزا کاٹی جبکہ اسے اسرائیلی حکام نے 2015 میں 15 ماہ کے لئے گرفتار کیا تھا ۔ 2017 میں بھی اس نے سزا اور انتظامی نظربندی کے نام 20 ماہ کی سزا کاٹی ۔

رام اللہ پہنچنے کے بعد خالدہ جرار اپنی بیٹی سوہا کی قبر کی زیارت کے لیے قبرستان گئی جو جولائی میں فوت ہو گئی تھی ۔ جبکہ اس کے والد بھی 2017 میں اس کی قید کے دوران اس دارفانی کو خیر باد کہہ گئے ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles