برطانیہ میں ایندھن بحران ، فوجی ڈرائیوروں کو سٹینڈ بائی رکھنے کا اعلان

برطانوی حکام نے کہا ہے کہ ایندھن بحران کی بنیادی وجہ آئل ٹینکر لے جانے والے ڈرائیوروں کی شدید قلت کی وجہ سے تھا ۔ بحران قابو میں ہے ۔ تاہم بڑے شہروں میں آج بھی کئی اسٹیشن بند رہے جس سے کاریں ایندھن بھرنے کے لیے کئی گھنٹے انتظار کرتی رہیں ۔

انتشار ، جھگڑوں اور پانی کی خالی بوتلوں سے بھرے ہوئے ایک ہفتے میں برطانوی وزراء نے بار بار کہا کہ بحران کم ہورہا ہے لیکن بدھ کے روز فوجیوں کو ایندھن کے ٹرک چلانے کا حکم دیا ۔

سکریٹری خزانہ سائمن کلارک نے کہا ہے کہ بحران اب مکمل طور پر قابو میں ہے ۔

بدھ کے روز برٹش پٹرول ٹریڈرز ایسوسی ایشن ، جو آزاد گیس اسٹیشنوں کی نمائندگی کرتی ہے اور جو برطانیہ کے 8،380 اسٹیشنوں میں سے دو تہائی ہے نے اعلان کیا کہ اس کے 27 فیصد اسٹیشنوں میں ایندھن ختم ہوچکا ہے اور کہا کہ اسے توقع ہے کہ 24 کے بعد صورتحال بہتر ہوجائے گی ۔

یورپی یونین کے ممالک سے دسیوں ہزار ٹرک ڈرائیوروں کی برطانیہ روانگی کے باوجود برطانوی وزراء نے اس میں بریکسٹ کے لیے کسی بھی کردار کی بار بار تردید کی ہے اور وزراء نے کورونا کی وجہ سے بندش کی طرف اشارہ کیا جس نے دسیوں ہزار ٹرک ڈرائیوروں کی جانچ کو روک دیا ۔

مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
مواضيع ذات صلة
Related articles